Thursday, January 30, 2014

press cutting










protest led zaffar akber bhat at press colony against pathribal fake encounter case





سرینگر/30جنوری /کے این ایس / پتھری بل فرضی انکاﺅنٹر کیس بندکرنے کیخلاف حریت کانفرنس (ع) کے لیڈران اورکارکنان نے پریس کالونی میں آوازبلند کی ۔اس موقعہ پر سینئرلیڈرظفراکبربٹ نے حقوق البشر پامالیوں کی روکتھام کیلئے سخت قوانین کی منسوخی کوناگذیر قراردیتے ہوئے کہاکہ مسئلہ کشمیرکے حل اورپامالیوں کی روکتھام کیلئے عالمی برادر ی کوآگے آناچاہئے۔اس دوران حریت(ع) نے پتھری بل کیس بند کرنے کیخلاف 31جنوری کوہڑتال کال دہراتے ہوئے عوام سے نمازجمعہ کے بعدپُرامن احتجاج کرنے کی اپیل کی ہے۔کشمیر نیوزسروس کے مطابق حریت کانفرنس(ع) کی طرف سے پتھری بل سانحہ میں ملوث فوجی اہلکاروں کو بری کرنے کے فیصلے کے خلاف ہفتہ بھر کے احتجاجی پروگرام کے سلسلے میں لالچوک سرینگر میں حریت(ع) شعبہ رابطہ عامہ کے سربراہ ظفر اکبر بٹ ،شعبہ عوامی بیداری کے سربراہ جاوید احمد میر اور دیگر درجنوں حریت(ع) کارکنوں کے ایک پرامن احتجاجی مظاہرے کے دوران پتھری بل واقعہ میں ملوث فوجی اہلکاروں کے خلاف فوجی عدالت کی جانب سے کیس خارج کرنے کے خلاف کشمیر میں افسپا ، پبلک سیفٹی ایکٹ، اور ایسے تمام کالے قوانین کے خاتمے ، حقوق انسانی کی سنگین پامالیوں پر روک اور سالہاسال سے جیلوں میں مقید سیاسی نظر بندوں کی رہائی کے حق میں آواز بلند کی۔ اس موقعہ پر ظفراکبربٹ نے کہاکہ بھارت سمیت دنیا بھر میں مختلف قوانین انسانوں اورانکے حقوق کے تحفظ کیلئے بنائے جاتے ہیں لیکن کشمیر میں افسپااورپی ایس اے جیسے کالے قوانین نافذ کرکے نہ صرف یہ کشمیری عوام کے بنیادی شہری حقوق پرکاری ضرب لگائی گئی ہے بلکہ ان ہی کالے قوانین کی آڑ میں بے گناہوں کوموت کی نیندسلادینے کے ساتھ ساتھ پُرامن جدوجہد کی پاداش میں کشمیری حریت پسند سیاسی لیڈران ،کارکنان اور نوجوانوں کوجیل کی سلاخوں کے پیچھے دھکیل کرطویل وقت تک زینت زندان بنادیا جاتا ہے۔ظفراکبر بٹ نے نامہ نگاروں کوبتایاکہ حریت کانفرنس کالے قوانین کے خاتمے ،حقوق انسانی پامالیوں کی روکھتام اورمسئلہ کشمیر کے حل کیلئے اپنی پُرامن جدوجہد جاری رکھی جائیگی ۔انہوں نے کشمیر میں حقوق انسانی کی سنگین پامالیوں اور کشمیری عوام کے خلاف ڈھائے جا رہے مظالم کے تئیں عالی برادری کی بے حسی کو افسوسناک قرار دیتے ہوئے کہا کہ کشمیر میں عملاً فوج کی حکمرانی ہے اور یہاں انسانی اور جمہوری قدروں کی کوئی قدر و قیمت نہیں۔ انہوں نے کہا کہ پتھری بل کے واقعہ میں پانچ نہتے شہریوں کے قتل میں ملوث فوجی اہلکاروں کوکلین چٹ دینے سے ہمارے اس موقف کو تقویت ملی ہے کہ کشمیر میں عدل و انصاف اور انسانی حرمت کوئی معنی نہیں رکھتے ۔ انہوں نے کہا کہ کشمیر ی عوام ایک پر امن اور باجواز جدوجہد میں مصروف ہیں اور یہ عالمی برادری کی ذمہ داری بنتی ہے کہ وہ مسئلہ کشمیر کے حل اور کشمیری عوام پرڈھائے جانے والے مظالم کی روکتھام کیلئے آگے آئیں۔ انہوں نے کہا کہ حریت کانفرنس(ع) کشمیر میں افسپا اور دیگر کالے قوانین کے خاتمے اور یہاں کے عوام کے خلاف ڈھائے جا رہے مظالم، کشمیرسے فوجی انخلا اور مسئلہ کشمیر کے منصفانہ حل کے لئے اپنی جدوجہد جاری رکھے گی اور کشمیر یوں کے نمائندہ قیادت کی حیثیت سے ہم یہ واضح کر دینا چاہتے کہ مسئلہ کشمیر کے حل میں مزید تاخیر کسی بھی طور اس خطے کے دائمی امن کے مفاد میں نہیں ہے ،لہٰذا اگر جنوبی ایشیا میں امن اور ترقی کا خواب دیکھنا ہے تو مسئلہ کشمیر کا حل نا گزیر امر ہے ۔دریں اثناءحریت(ع) نے پتھری بل کیس بند کرنے کیخلاف 31جنوری کوہڑتال کال دہراتے ہوئے عوام سے نمازجمعہ کے بعدپُرامن احتجاج کرنے کی اپیل کی ہے۔کے این ایس کوموصولہ بیان میں حریت کانفرنس(ع) کے ترجمان نے پتھری بل سانحہ میں ملوث فوجی اہلکاروں کو بری کرنے کیخلاف اور کشمیر میں نافذ کالے قوانین کو ہٹائے جانے کے سلسلے میں 31 جنوری جمعہ کو مکمل ہڑتال کی اپیل دہراتے ہوئے کشمیر کے حریت پسند عوام سے اپیل کی ہے کہ وہ اس ہڑتال کو ہر سطح پر کامیاب بنا کر تحریک مزاحمت کے تئیں اپنی بھر پور وابستگی کا مظاہرہ کریں اور جمعتہ المبارک کو بعد از نماز جمعہ پر امن احتجاج کریں۔ادھرحریت(ع) کے سینئرلیڈرظفراکبربٹ اورجاویداحمد میر نے کشمیری عوام سے پُر زور اپیل کی کہ وہ کالے قوانین کی منسوخی کے مطالبے میں 31جنوری بروز جمعہ کو حریت کانفرنس کی طرف سے دی گئی ہڑتال کی کال کو کامیاب بنا کر ان مظالم کے خلاف متحدہ ہو کر احتجاج کریں

Wednesday, January 29, 2014

Mass contact of sgr distt 28 and seminar on 29 at aphc rajbagh







 سرینگر/29جنوری /کے این ایس / حرےت کانفرنس (ع ) کے سنےئر لےڈراورسالویشن مومنٹ کے چےر مےن ظفر اکبر بٹ نے کہا کہ کشمےری عوام ظلم و استبداد کے خلاف ہر صورت میں اور ہر سطح پر جدوجہد جاری رکھیں گے اور سخت گےر قوانےن سے نجات پانے کے لئے بھر پور مزاحمت کی جائے کی ۔کے اےن اےس کو موصولہ بےان مےں کہا گےا ہے کہ پتھری بل فرضی جھڑپ میں پانچ نہتے بے گناہ اور معصوم کشمیریوں کی بے دردانہ شہادت کے پس منظر میں فوجی عدالت سے قاتلوں کو بری کرنے کے تناظر میںحریت کانفرنس کے ایک ہفتے کے احتجاجی پروگرام کے ذیل میں ایک اہم سمینار بعنوان” افسپا کی تلوار سے انصاف کا خون“ صدر دفتر راجباغ پر منعقد ہو ا۔ سمینار سے خطاب کرتے ہوئے حریت رہنماءو چیرمین سالویشن مومنٹ ظفراکبر بٹ نے کہا کہ ، ”کشمیری عوام ظلم و استبداد کے خلاف ہر صورت میں اور ہر سطح پر جدوجہد جاری رکھیں گے ۔ انہوں نے کہا کہ چنانچہ عوامی تحریک کو دبانے کےلئے جو ظالمانہ قوانین یہاں نافذ کئے گئے ہیں ان کی سخت گیرانہ گرفت سے نجات پانے کےلئے بھر پور مزاحمت کی جائے گی۔ بےان کے مطابق اس سلسلے میں سیاسی ،اخلاقی اور قانونی چارہ جوئی کےلئے ایک منظم کوشش بروئے کار لانے کےلئے اپنے عزم کو دہراتے ہوئے حریت کانفرنس جملہ کالے قوانین کی واپسی کے لئے نہایت سنجیدہ عمل کا آغاز کر چکی ہے۔ ظفر اکبر نے کہا پتھر ی بل واقعہ کو غیرانسانی ، غیر مہذبانہ اور سفاکانہ قراردے کر اس عزم کا اظہار کیا گیا کہ کشمیری عوام کو کسی بھی طور پر زیر نہیں کیا جاسکتا ۔ پتھری بل واقعہ کے متعلق متذکرہ مجرمانہ حرکات کے خلاف عالمی ضمیر کو جھنجوڑنے کےلئے کہا گیا تاکہ مجرمین کو عدل و انصاف کے تقاضوں کے عین مطابق قرار واقعی سزا دلائی جا سکے ۔ انہوں نے کہا کہ کشمیر میں حقوق انسانی کی سنگین اور بدترین پامالیوں کا سبب صرف اور صرف یہ ہے کہ بھارت طاقت کے بل بوتے پر یہاں کی جائز اور مبنی برحق تحریک کو دبانے کےلئے تمام تر سیاسی ، اخلاقی اور قانونی سرحدوں کو پھلانگتا جا رہاہے تاکہ یہاں کے عوام اس تحریک سے دستبردار ہوجائیں لیکن جب تک کشمیر کا مسئلہ حل نہیں کیا جاتا کشمیری عوام اپنی جدوجہد جاری رکھیں گے“ افسپاAFSPAاور دیگر کالے قوانین کے کشمیر میں نفاذ کے نتیجے میں بے لگام فورسز کو بے پناہ حاصل اختیارات کے تحت کشمیری عوام کے قتل و غارت گری کی لائسنس فراہم کر نے کے خلاف شدید ردعمل کا اظہار کرتے ہوئے افسپا اور دیگر کالے قوانین کے خاتمے کےلئے قانونی اور عوامی سطح پر مہم چلانے کو تحریک آزادی کو تکمیل تک پہنچانے کا ایک راستہ قرار دیا۔ بےان کے مطابق انہوں نے کہاکہ حریت کانفرنس مسئلہ کشمیر کے حل کےلئے وعدہ بند ہے اور اس مسئلے کو اقوام متحدہ کی قراردادوں یا پھر سہ فریقی مذاکرات کے ذریعے حل کرنے کےلئے کوشاں ہے۔ اس ضمن میںحریت کانفرنس نے ایک سازگار ماحول کے قیام کے لئے کشمیر سے افسپا کا خاتمہ ، کالے قوانین کی منسوخی،نظربندوں کی رہائی اور فوجی انخلا شامل ہے کا اپنا مطالبہ دہرایا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہٹ دھرمی چھورڈ کر حکومت ہندوستان کو حریت کانفرنس کی جانب سے پیش کردہ مطالبات کو روبہ عمل لانے کےلئے مثبت اقدامات اٹھانے چاہئے ۔


Saturday, January 25, 2014

press cuttings





Zaffar put under house arrest on the eve of 26th jan


Glowing Tributes to handwara and kupwara martyrs and condemned the harassment of people and arrest of Jail release youths on the eve of 26th January Republican Day of India…..Zaffar.

Senior Hurriat leader and chairman Salvation movement Zaffar Akber Bhat in a statement paid glowing tributes to martyrs of Handwara and kupwara who were massacred by Indian Army before and after a day of 26th Republican day of India. Affected families are still waiting for justice but despite of inquiry committees nothing  has come out in favour of Victims. Indian Army’s clean chit on Pathribal fake encounter case in favour of involved Army officers clearly shows that State authorities have nothing to do in such incidents  including CBI (indian’s most power full investigating agency). It is Army who decides that Kashmir is under their rule and whenever and where they want can kill any body with the help of Draconian laws  with out any reasons and no body can question them nor they will obey any investigation report including CBI.
Kashmiris are not against celebration of Republican Day as it is democratic right for them but kashmiris will observe it Black day as a protest upto Kashmir is liberated from Indian said Zaffar Akber Bhat.
Zaffar condemned the harassment of common people and arrest of jail released youths on the eve of 26th jan Republican Day and said that how kashmiris are facing difficulties even 15th august,26thjan and as and when any central authority from Dehli are visiting Kashmir. He appled to the world community to use their good office to stop the human rights violation continued at the hands of Indian forces in Kashmir.

Tuesday, January 21, 2014